معروف سرائیکی و پنجابی فوک گلوکار انتقال کر گئے

Tuesday, June 29undefined, 2021, 04:59:14 PM

لاہور:شاماں پے گیاں، میں چھم چھم نچدی پھراں، چنگا دلبر پیار کتوئی، دو دو تھاں تے پیار وی چنگے ہوندے نئیں، ڈھولے تے ساڈی یاریاں، پیار نال پیار دا جواب ہونا چاہی دا اور کوئی دسو ہا سجن دا ہال جیسے گیت گانے والے گلوکار اللہ دتہ لونے والا انتقال کر گئے۔نجی اخبار میں شائع رپورٹ کے مطابق اللہ دتہ لونے والا دل کا دورہ پڑنے سے آبائی شہر چنیوٹ میں 64 برس کی عمر میں انتقال کر گئے۔طویل العمری کے باعث اگرچہ اللہ دتہ لونے والا نے مصروفیات محدود کردی تھیں، تاہم انہیں موسیقی کی محفلوں سمیت دیگر پروگرامات میں دیکھا جاتا تھا۔اللہ دتہ چنیوٹ کے چھوٹے گاوں لونے والا میں 1957 میں پیدا ہوئے اور انہوں نے اپنے نام کے پیچھے گاوں کا نام لگایا۔اللہ دتہ لونے والا نے موسیقی کی ابتدائی تعلیم اوکاڑہ کے میوزک ٹیچر استاد میاں عیسی خان اور ان کے بیٹے میاں طالب حسین سے لی، جس کے بعد انہوں نے کم عمری میں ہی گلوکاری کا آغاز کیا۔
اللہ دتہ لونے والا نے اسکول میں تعلیم کے دوران ہی گلوکارہ کی آغاز کیا تھا اور ان کا پہلا میوزک ایلبم پنجاب کے شہر جھنگ سے گرام فون پر ریکارڈ کرکے ریلیز کیا گیا جب کہ دوسرا ایلبم بھی گرام فون کے ذریعے ریکارڈ کرکے فیصل آباد سے ریلیز کیا گیا تھا۔اللہ دتہ لونے والا کو شاندار گلوکاری کی وجہ سے حکومت پاکستان نے پرائڈ آف پرفارمنس کے ایوارڈ سے بھی نوازا تھا جب کہ انہوں نے دیگر کئی ایوارڈز بھی جیت رکھے تھے۔انہیں نہ صرف سرائیکی بلکہ پنجابی سمیت پنجاب میں بولی جانے والی دیگر زبانوں میں بھی گلوکاری کرنے کی وجہ سے شہرت حاصل رہی۔اللہ دتہ لونے والا کے مقبول فوک گانوں کو نہ صرف نصیبو لال جیسی گلوکاراوں نے ان کی ترتیب دی گئی دھن پر گایا بلکہ ان کے گانے شاماں پے گیاں کو کوک اسٹوڈیو بھی نئے انداز میں گایا گیا۔