شدید گرمی کیساتھ ساتھ غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کا عذاب، شہری بلبلا اٹھے

Thursday, June 10th, 2021, 11:21:44 AM

لاہور: پاکستان میں ان دنوں شہریوں کو شدید گرمی کیساتھ ساتھ غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کا عذاب بھی بھگتنا پڑ رہا ہے۔
اسلام آباد کے علاقے ملپور میں بجلی کی طویل بندش کے باعث شدید گرمی میں سرکاری سکول کے 25 بچے بے ہوش ہو گئے جنہیں ہسپتال منتقل کیا گیا۔کراچی میں بھی بجلی کی طویل اور غیر اعلانیہ بندش نہ رک سکی جبکہ لاہورکے مختلف علاقوں میں بجلی کی آنکھ مچولی اور ٹرپنگ نے شہریوں کو بے حال کر دیا۔فیصل آباد، جڑانوالہ، چک جھمرہ، جھنگ، ٹوبہ ٹیک سنگھ، ملتان اور خانیوال میں بھی گھنٹوں بجلی غائب رہنا معمول بن گیا۔گرمی میں لوڈشیڈنگ کے ستائے شہری حکومت اور واپڈا حکام کے خلاف برس پڑے۔ ڈی جی خان کے سیاحتی مقام فورٹ منرو میں گھنٹوں بجلی کی بندش کے خلاف علاقہ مکین اور تاجر سراپا احتجاج بن گئے، ٹائر جلا کر کوئٹہ جانے والی شاہراہ بند کر دی۔
پشاور میں طویل لوڈشیڈنگ پر حکومتی ایم پی اے فضل الہی مشتعل ہو گئے۔ انہوں نے کارکنوں کے ساتھ کوہاٹ گرڈ سٹیشن میں داخل ہو کر تین فیڈرز کی بجلی خود ہی بحال کر دی۔ایم پی اے فضل الہی کے خلاف پہلے بھی ازخود بجلی بحال کرنے پر کار سرکار میں مداخلت پر مقدمہ درج ہوا تھا۔
دوسری جانب حماد اظہر کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ گزشتہ اڑتالیس گھنٹوں سے لوڈشیڈنگ کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے جس کی مختلف وجوہات ہیں۔ ایک وجہ تربیلا ڈیم میں روٹین مرمت کا کام جاری ہے جو چار روز میں مکمل ہو جائے گا جس سے تین ہزار میگاواٹ بجلی سسٹم میں واپس آ جائے گی۔حماد اظہر نے کہا کہ ٹینیکل آٹیجز کو آج رات تک دیگر پلانٹس سے حل کر لیں گے۔ تکنیکی ایشوز ہیں جو ایک سے دو دن میں دور ہو جائیں گے۔ان کا کہنا تھا کہ لوڈشیڈنگ کی وجہ کیپسٹی نہیں ہے، بجلی ہمارے پاس ضرورت سے زیادہ موجود ہے۔ تکنیکی وجوہات کے باعث لوڈشیڈنگ ہو رہی ہے ایک دو روز میں قابو پا لیا جائے گا۔