اسلام آباد:پاکستان مسلم لیگ نون نے مطالبہ کیا ہے کہ 20 پولنگ سٹیشن نہیں، پورے این اے 75 میں دوبارہ الیکشن کرایا جائے، ڈسکہ میں ضابطہ اخلاق کی کھلم کھلا خلاف وزری ہوئی، حکومت پنجاب یہ بتانے میں ناکام رہی کہ 20 پریذائڈنگ آفیسر کہاں گئے۔
خواجہ سعد رفیق نے لیگی رہنماں کے ہمراہ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ این اے 75 میں دھاندلی نہیں، دھاندلا کیا گیا، سرکاری فنڈز استعمال کر کے قبل از انتخاب دھاندلی کی گئی، ڈسکہ میں ضابطہ اخلاق کی کھلم کھلا خلاف ورزی ہوئی، فائرنگ کر کے ووٹرز میں خوف و ہراس پیدا کیا گیا، خوف و ہراس پھیلانے کی وجہ سے ڈسکہ میں ٹرن آٹ کم رہا، تحریک انصاف نے کوئی ضمنی الیکشن نہیں جیتا۔
سعد رفیق کا کہنا تھا کہ یہ حکومت عادی ووٹ چور ہے، حکومت کا ایک ہی کام ہے مخالفین کو ٹارگٹ کرنا، آپ سمجھتے ہیں لنگر خانے کھول کر قوم کی خدمت کر رہے ہیں، آپ نے لوگوں کو سبز باغ دکھائے تھے، قوم کو بھوکا مار دیا، ڈھائی سال گزر گئے، حکومت کی کوئی پرفارمنس نہیں، لوگ ووٹ کیسے دیں گے، آٹا چوروں اور ووٹ چوروں کی حکومت ہے، یہ ہے نیا پاکستان ؟ ایسی ہوتی ہے ریاست مدینہ؟۔