چین اپنے حیرت انگیز تعمیراتی منصوبوں کے لیے مشہور ہے اور ہر جگہ شاہراں، فلائی اوورز کا جال بچھایا ہوا ہے۔
مگر چین کے پہاڑی صوبے گوئیژو کا چیان چن انٹرچینج تو ذہن گھمادینے والا ہے جو کسی رولر کوسٹر کی طرح اس پر سفر کرنے والے کی ذہنی صلاحیت کا امتحان لیتا محسوس ہوتا ہے۔
اس انٹرچینج کی تعمیر اس صوبے کے شہر چنگ چونگ میں 2009 میں شروع ہوئی تھی اور 2017 میں اسے ٹریفک کے لیے کھولا گیا۔ہوسکتا ہے کہ آپ کو یقین نہ آئے مگر یہ انٹرچینج 5 منزلہ یا لیولز پر مشتمل ہے۔ان 5 لیولز میں مجموعی طور پر 18 مختلف ریمپس ہیں جو 8 مختلف راستوں کی جانب جاتے ہیں اور اس کا بلند ترین ریمپ زمین سے 37 میٹر بلند ہے۔
یہ ایسا پیچیدہ انٹرچینج ہے جسے اپنی اپنی منازل کی جانب بڑھنے والے ڈرائیور کے بھیانک خواب کے طور پر بھی جانا جاتا ہے۔
بیشتر ڈرائیورز کو اگر راستہ یاد نہ ہو تو ان کے لیے اسمارٹ فون پر ڈیجیٹل نقشے کی مدد لینا ضروری ہوجاتا ہے، ورنہ راستہ بھولنے کا امکان بہت زیادہ ہوتا ہے۔
جب یہ تعمیر ہوا تھا تو اس کے کچھ ماہ بعد سوشل میڈیا پر لوگوں نے نشاندہی کی تھی کہ اکثر جی پی ایس سستم بھی 5 مختلف لیولز کے باعث الجھن کا شکار ہوجاتا ہے اور راستہ بتانے سے قاصر ہوجاتا ہے۔
تاہم حکام کا کہنا ہے کہ اس انٹرچینج پر راستوں کی سمت اور باہر نکلنے کے راستوں کی واضح نشاندہی کی گئی ہے۔