عرب دنیا کی جانب سے مریخ کے لیے بھیجا جانے والا پہلا خلائی جہازامید(ہوپ) صرف چند روز بعد 9 فروری کو مریخ کی فضا میں داخل ہوجائے گا۔ مدار میں گردش کرتے ہوئے یہ مریخی موسم کا تفصیلی مطالعہ کرے گا۔متحدہ عرب امارات کی جانب سے سرخ سیارے پر بھیجا گیا یہ پہلا مشن ہے جو مریخ کی سطح پر تو نہیں اترے گا لیکن اس کے مدار میں زیرِ گردش رہے گا۔ تاہم 18 فروری کو امریکا کی مریخی خلائی گاڑی (روور) پرویزروینس مریخی سطح کو چھوئے گی اور اس کے بعد چینی روور اسی سال اپریل میں مریخ پرچلنے پھرنے لگے گا۔ اس طرح تین مختلف ممالک کی جانب سے مریخی جہاز اسی سال اپنی منزل تک پہنچیں گے۔اماراتی خلائی ایجنسی میں مریخی مشن کی سربراہ سارہ الامیری نے بتایا کہ ان کی ٹیم مریخی مشن کے اہم مرحلے کے لیے پوری طرح تیار ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ مریخی مشن سے رابطہ کرنے میں کسی قسم کی تاخیر مشن کو تباہ کرسکتی ہے۔
متحدہ عرب امارات کا یہ پہلا مشن اس وقت 80 ہزار کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے مریخ کی جانب رواں دواں ہے۔